Altaf Mahmood Hashmi

Profile by Altaf Mahmood Hashmi

After doing Mechanical Engineering from the University of Engineering & Technology Taxila he joined Climax Engineers Company Gujranwala, a large size producer of fans, electric watt meters, transformers, air conditioners, wheat thrashers, etc. He served this outfit as Assistant Manager for three months till he was summoned by Pakistan Army to join Corps of Electrical & Mechanical Engineers for two and half years under compulsory service ordinance. After fulfilling necessary formalities he joined Pakistan Army on 12 Feb 1983 as Captain. He was promoted to the rank of Major in November 1990 and was lifted to the rank of Lieutenant Colonel in September 1997. He suffered from cardiac problems, resultantly he underwent open-heart surgery on 30th March 1998 at Armed Force Institute of Cardiology (AFIC) Rawalpindi. He retired from Pakistan Army on 6th September 2008.
During the service in Army, he worked in multi-dimensions with courage and talent, e.g.
1. As a Mechanical Engineer he achieved following milestones:-
a. Introduced and installed “Oxidation Plant” for surface treatment of weapons and ferrous items to replace “Rebrowning” which would take seven days for a lot of 50 weapons whereas the former takes only two hours for the same number of weapons.
b. Received commendation certificate from Chief of the Army Staff for achieving a recurring annual saving of US$ 125,300 per year for Pakistan Ordnance Factories by manufacturing a Proof Shot for ammunition.
c. Planned and executed crash repair programs and repaired/overhauled almost 300 vehicles in one month.
d. Saved US$ 710,000 by testing and modifying ammunition, earlier declared as unserviceable.
e. Prepared prototype anti-mine shoes but it could not be tested.
f. Instrumental in modifying Armored Personnel Carrier (APCs) into a weapon system without a major change in APCs.
2. He belongs to religious scholars and Sufis family.
a. His sixth forefather Darwesh Muhammad wrote a Quran-e-Pak about 300 hundred years ago manuscript handwritten on 957 pages which is wonderful masterpiece of calligraphy saved with him.
b. His grandfather Khwaja Mahboob Alam (1850 – 1917 AD) after doing Dars-e-Nizami he specialized in Hadis & Islamic Judicial Verdict and got appointed Deputy Chief Justice of Supreme Court of Rampur State for 10 years (1875 to 1885). He remained the Islamic Judicial Officer of Ambala District for 10 years (1888- 1898 AD). He is a writer of five books which are well known but one (Ziker-e-Khair) is too famous that as yet 21000 copies have been published.
c. His father Abu Alwafa Siddiq Ahmad after graduating Dars-e-Nizami in 10 years to become Islamic Scholar, qualified Tasawaf courses in eight years and earned a good name as Sufi of the area. He wrote many books, two have been published and the remaining two are in the pipeline. He translated a famous Arabic book “Khasais-e-Kubra” by Allama Jalal ud din Sayuti R.A. in Urdu.
In following his ancestors, Altaf Mahmood Hashmi wrote many books and articles a few of which are:
a. Jaanib-e-Husn-e-Lazawal (Towards the eternal/ everlasting beauty). It is a story of his visit to various shrines of Auliya Allah (Saints) in Pakistan & Iran. Specialty is the literary language and intrinsic/esoteric contemplation.
b. Altaf Namay (Letter of Altaf): His letters containing observation, research and guidance oriented, written to friends and other personalities.
c. Mazameen-e-Altaf (Articles of Altaf) it consists of six or seven daily life article of a Muslims the most important two are:
(1) Zakat: It directly addresses the types of zakat with a zakat calculator in MS Excel. A need of every Muslim.
(2) Hathon Ki Kamai (Earnings of own hands): It covers why afflictions fall on a human being and how they must be negotiated. Widely published article in paper & digest. A year ago it was published in an Urdu Newspaper in Canada also.
d. Mushahidat (esoteric/intrinsic): the writer met thousands of claimant/plaintiff and known Sufis in Pakistan, UAE, and Saudi Arabia. He felt some insight which he has tried to put in black and white in comparison with the other Sufis he visited.
e. Parwar-e-Mahboob (Dynasty/lineage of Mehboob) the ancestral details including the family lineage of his grandfather Khawaja Mehboob Alam R.A. till Hazrat Abbas Alamdar R.A. & Hazrat Abdul Muttalib R.A. Moreover detail of his descendants/progeny till to date.
f. Chrag-e-Mahboob (Lamps of Mahboob) Khawja Mahboob Alam R.A. leftover 80 spiritual successors (Khulafa). These days he is gathering authentic information about them to compile as Chrag-e-Mehboob.
6. Zikr Movement (Tahreek-e-Zikr) In 2008 Tahreek-e-Zikr (repeatedly invoking the name of Almighty Allah with voice) was started with a view to inculcate Allah’s love in the heart of humanity. With the grace of Allah at present, about 100 circles of ladies and gents are functioning. A circle was formed in Dubai in 2009 AD which has the honor of 11 non-Muslims (5 Chinese and 6 Nigerian Christians) to embrace Islam in 2010 & 2011 AD. The movement is nonpolitical, non aligned having members from all the Muslim sects.
7. Lectures: Altaf Mahmood Hashmi delivers lectures on various topics related to Tasawaf and Islam. His favorite topic is that at present the Muslims are not that weak as they are posed. On this topic, he has delivered many speeches to lawyers, professors, engineers, and doctors at various places in Pakistan and United Arab Emirates.
8. During service he got following major qualifications:-
a. Automobile and Military Equipment Engineering: From College of E&ME.
b. Weapon System Engineering: From College of E&ME.
c. Management Computer Training: From NUST (College of E&ME) Got 1st Position with distinction (96% marks).
d. Logistic Engineering & Management: From College of E&ME, Scored 1st Position.
e. MBA-IT (Executive): From Comsats-Institute of Information Technology, Wah Cantt. Topped in the class of 16 Student with 3.49 CGPA.
f. Many other short courses.

July 23, 2020

اپنی کلاس میں سب سے پہلے اس نالائق طالبعلم، الطاف ہاشمی کو کلائیمکس انجنیئرنگ کمپنی گوجرانوالہ میں 1200 روپے ماہانہ پر جاب ملی۔ میں نے 16 ستمبر 1982ء کو یہ کمپنی جوائن کی اور یکم فروری 1983ء کو چھوڑ کر 12 فروری 1983ء کو آرمی میں شمولیت اختیار کی۔ آرمی کی پہلی پے سلپ 1800 روپے مبلغ، نصف جن کا 900 روپے ہوتا ہے، مقرر ہوئی۔ اللہ تعالیٰ نے یہ دونوں جاب مجھے ایک بزرگ کی دعا سے عنایت فرمائے۔ میں نے شاید افضل جاوید کو کہانی سنائی ہو۔ اس کہانی کے دو میں سے ایک حصہ آپ کے ساتھ شیئر کرتا ہوں۔ میں آخری سمسٹر میں تھا کہ میری ایک سبجیکٹ میں سپلی آ گئی (اس کی لمبی کہانی اگلی قسط میں پیش کروں گا۔) اس وقت کلائیمکس میں ویکنسیاں آئی ہوئی تھیں جس پر میں نے بھی پروویژنل سرٹیفیکیٹ پر اپلائی کر دیا۔ اسی دوران مجھے ٹیکسلا میں ان بزرگ کا خط موصول ہؤا جس میں انہوں نے مجھے حویلی لکھا آنے کو کہا۔ میں وہاں پہنچا تو مجھے لے کر چشتیاں شریف میں حضرت نور محمد مہاروی رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ کے مزار پر فاتحہ کے لیے لے گئے۔ وہاں سے نکلے تو مجھ سے کہا کہ میں نے تمہیں اللہ تعالیٰ سے تمہاری جاب کے لیے دعا کی غرض سے یہاں بلوایا تھا۔ رات کو ہم حاصل پور میں ڈاکٹر عظیم صاحب کے ہاں قیام پذیر تھے کہ ایک صاحب مجھے تلاش کرتے ہوئے رات کو دو بجے گوجرانوالہ سے سپیشل گاڑی پر حاصل پور پہنچے کہ صبح کلائیمکس میں انٹرویو ہے۔ حضرت نے مجھ سے فرمایا کہ یہ وہ نوکری نہیں ہے جس کے لیے اللہ تعالیٰ سے درخواست کی ہے، البتہ اللہ تعالیٰ نے ہ،اری تسلی کی خاطر خالی نہیں لوٹایا۔ پوری رات سفر کر کے دن تین بجے کلائیمکس پہنچا تو انٹرویو ختم ہو چکنے کے بعد بورڈ disassemble ہو چکا تھا۔ میرے پہنچنے پر بورڈ دوبارہ بیٹھا اور چار بجے کے قریب انٹرویو ہؤا اور ایک سوال کے جواب میں مجھے اسی وقت منتخب ہونے کا عندیہ دے کر اگلے دن نوکری پر آنے کا حکم دیا گیا۔ میں نے بڑی مشکل سے 16 ستمبر کی تاریخ لی اور اسی تاریخ کو نوکری شروع کر دی۔

انٹرویو میں دو ممبر تھے، ایک ریاض احمد صاحب، جنرل مینیجر الیکٹریکل اور جاوید اقبال بھٹو صاحب، جنرل مینیجر میکینیکل۔ ان کے استفسار پر میں نے اپنے پرجیکٹ کا تعارف کرایا جس کا تعلق پاکستان آرڈیننس فیکٹریز واہ کینٹ کی براس ملز کے ہائیڈرالک سسٹم سے تھا۔ ریاض صاحب کے کہنے پر بھٹو صاحب نے سوال کیا ’’ایک ہائیڈرالک مشین ہر لحاظ سے ٹھیک ہے لیکن کام نہیں کر رہی، اس میں کیا پرابلم ہو سکتا ہے؟‘‘ میں نے دو تین خرابیاں بتائیں لیکن وہ قبول نہ ہوئیں کہ مشین مکمل طور پر ٹھیک ہے۔ مجھے اندازہ ہؤا کہ جاب ملنا ممکن نہیں اس لیے مناسب یہ ہے کہ ان سے کھل کر گپ شپ کروں اور چلتا بنوں۔ چنانچہ میں نے ان سے عرض کیا ’’سر! اگر مجھے سوچنے کے لیے چند منٹ دے دیں تو میں مشکور ہوں گا۔‘‘ ریاض صاحب بولے ’’تم یہ کرسی اٹھاؤ اور اس دیوار کے پاس چلے جاؤ، جب اچھی طرح سوچ لو تو کرسی اٹھا کر واپس آ جانا۔‘‘ میں کرسی اٹھا کر ایک طرف چلا گیا اور سوچنے کی ایکٹنگ کرنے لگا۔ چند منٹ بعد پھر کرسی اٹھائی اور ان کے میز کے سامنے آ کر بیٹھ گیا اور بڑے اعتماد سے بھٹو صاحب کو مخاطب کرتے ہوئے کہنا شروع ’’سر! میرا خیال ہے کہ گرمی کی وجہ سے ہائیڈرالک آئل کی viscosity کم ہو گئی ہے …….‘‘ ابھی میں نے اتنا ہی کہا تھا کہ بھٹو صاحب نے ریاض صاحب سے کہا ’’میری طرف سے یہ منتخب ہے، آپ نے کچھ پوچھنا ہو تو پوچھ لیں۔‘‘ انہوں نے مزید کچھ پوچھنے سے معذرت کر لی کہ یہ اُن کا فیلڈ ہے اگر وہ مطمئن ہیں تو ٹھیک ہے۔ اب میری جوائننگ پر لمبی ڈسکشن ہوئی اور مجھے وہاں سے جانے کی اجازت ملی۔

آرمی کی کال آئی تو ہم تین کلاس فیلوز کا میڈیکل سی ایم ایچ کھاریاں ہونا مقرر ہؤا، مولوی اسماعیل صاحب، افضل جاوید اور یہ بندۂ ناچیز۔ الیاس نامی ایک اور امیدوار بھی ہمارے ساتھ شامل ہو گیا۔ مزے کا منظر اس وقت بنا جب سرجیکل سپیشلسٹ نے ہم چاروں امیدواروں کو سائیڈ بائی سائیڈ کھڑا کر کے سب کو اکٹھے شلواریں اتارنے کا حکم دے دیا۔ (ہمارے کنٹرول سے باہر زبردستی کی اس بے حیائی پر عابد عزیز سے معذرت کے ساتھ۔) ہم کچھ شرمائے لیکن مجھے اور افضل جاوید کو ٹی ایس ایف (ٹرِکّی سٹوڈینٹ فیڈریشن) کا پرانا رکن ہونے کی بنا پر زیادہ پریشانی نہیں ہوئی البتہ مولوی اسماعیل صاحب ’’اپنی‘‘ شلوار نیچے کرنے میں ذرا جھجکے تو اس پر ڈاکٹر نے بڑے پیار سے انہیں اُس وقت ’’ارادہ‘‘ کے ثواب سے آگاہ کر کے اس کارِ خیر پر آمادہ کیا۔ افضل جاوید کا شاید heart murmring کا مسلہ نکل آیا اور باقی ہم تینوں منتخب کر لیے گئے۔ ’’چار چوہے گھر سے نکلے کرنے چلے شکار، ایک کو آ گئی کھانسی باقی رہ گئے تین۔‘‘ اسماعیل صاحب کپتانی میں ہی فوج کو خیرباد کہہ گئے، الیاس میجری میں ریٹائر ہو گیا اور ’’ایک چوہے کی ہو گئی شادی اور یوں ہوئی



Contact:

Teachers:

Pictures:

Other Classes:

rss feed

technorati fav

Meta:


x Logo: Shield
This Site Is Protected By
Shield